تهر میں پانی کی قلت سے انسانوں کے ساتھ جانور بهی لقمہ اجل کا شکار ہونے لگے

  543   سوشل   October 14, 2018

تحریر

ThePakVoice Team

January 1, 2018

مٹھی ( رپورٹ: جی آر جونیجو ) تھرپارکر جس کی آبادی کا گذر باروں پر ھوتا ھے وہ صحرائے تھر ایک بار پھر سنگین قحط سالی کی لپیٹ میں آگیا ہے موسمی بارشیں کم پڑنے سے کوٸی زرعی پیداوار نہیں ھو سکی ھے نہ مویشی ک چارا ھو سکا جس کے باعث تھری لوگ شدید تکلیف میں آگٸے ھیں اور غریب تھری باشندے مجبوری میں تھرپارکر سے بٸراجی علاقوں کی طرف بڑی تعداد میں نقل مکانی کرنے پرمجبور ھو گٸے ھیں 

 

ابھی کٸی تھر کے دیہات نقل مکانی کے باعث خالی ھو چکے ھیں قحط سالی کے بعد تھر میں زیرزمیں پانی کی سطح نیچے ھونے کے باعث کنویں بھی سوک گٸے ھیں جس کے بعد تھری لوگ پینے کے پانی کے لیٸے پریشان ھیں
اور ان کی مویشی بھی مختلف امرض میں مبتلا ھو کر مر رھی ھے
اور جو بچ گئے ہیں انکو سستے داموں میں فروخت کرنے پر مجبور ہیں دوسری جانب حکومت سندھ نے قحط سالی کے پیش نظر تھرپارکر کے ساتھ ساتھ عمرکوٹ کی پچیس صحرائی دیھوں کو قحط زدہ قرار دے کر بیشتر علاقوں میں صرف پچاس کلو گندم دینے کی رلیف کاروائیاں بھی شروع کی گئی ھیں لیکن نادرا کی جانب سے جاری کردہ لسٹ میں قحط سے متاثرين کی بڑی تعداد رہ جانے سے غریب عوام سخت انتشار کا شکار ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں

.آپکا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا

Top